پھول کھلے ہیں لکھا ہوا ہے توڑو مت

عمیق حنفی

پھول کھلے ہیں لکھا ہوا ہے توڑو مت

عمیق حنفی

MORE BYعمیق حنفی

    پھول کھلے ہیں لکھا ہوا ہے توڑو مت

    اور مچل کر جی کہتا ہے چھوڑو مت

    رت متوالی چاند نشیلا رات جوان

    گھر کا آمد خرچ یہاں تو جوڑو مت

    ابر جھکا ہے چاند کے گورے مکھڑے پر

    چھوڑو لاج لگو دل سے منہ موڑو مت

    دل کو پتھر کر دینے والی یادو

    اب اپنا سر اس پتھر سے پھوڑو مت

    مت عمیقؔ کی آنکھوں سے دل میں جھانکو

    اس گہرے ساگر سے ناطہ جوڑو مت

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    پھول کھلے ہیں لکھا ہوا ہے توڑو مت نعمان شوق

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY