پی پی کے جگمگائے زمانے گزر گئے

خمارؔ بارہ بنکوی

پی پی کے جگمگائے زمانے گزر گئے

خمارؔ بارہ بنکوی

MORE BY خمارؔ بارہ بنکوی

    پی پی کے جگمگائے زمانے گزر گئے

    راتوں کو دن بنائے زمانے گزر گئے

    جان بہار پھول نہیں آدمی ہوں میں

    آ جا کہ مسکرائے زمانے گزر گئے

    کیا لائق ستم بھی نہیں اب میں دوستو

    پتھر بھی گھر میں آئے زمانے گزر گئے

    او جانے والے آ کہ ترے انتظار میں

    رستے کو گھر بنائے زمانے گزر گئے

    غم ہے نہ اب خوشی ہے نہ امید ہے نہ یاس

    سب سے نجات پائے زمانے گزر گئے

    مرنے سے وہ ڈریں جو بقید حیات ہیں

    مجھ کو تو موت آئے زمانے گزر گئے

    کیا کیا توقعات تھیں آہوں سے اے خمارؔ

    یہ تیر بھی چلائے زمانے گزر گئے

    RECITATIONS

    خمارؔ بارہ بنکوی

    خمارؔ بارہ بنکوی

    خمارؔ بارہ بنکوی

    پی پی کے جگمگائے زمانے گزر گئے خمارؔ بارہ بنکوی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY