پونچھ کر اشک اپنی آنکھوں سے مسکراؤ تو کوئی بات بنے

ساحر لدھیانوی

پونچھ کر اشک اپنی آنکھوں سے مسکراؤ تو کوئی بات بنے

ساحر لدھیانوی

MORE BYساحر لدھیانوی

    پونچھ کر اشک اپنی آنکھوں سے مسکراؤ تو کوئی بات بنے

    سر جھکانے سے کچھ نہیں ہوتا سر اٹھاؤ تو کوئی بات بنے

    زندگی بھیک میں نہیں ملتی زندگی بڑھ کے چھینی جاتی ہے

    اپنا حق سنگ دل زمانے سے چھین پاؤ تو کوئی بات بنے

    رنگ اور نسل ذات اور مذہب جو بھی ہے آدمی سے کمتر ہے

    اس حقیقت کو تم بھی میری طرح مان جاؤ تو کوئی بات بنے

    نفرتوں کے جہان میں ہم کو پیار کی بستیاں بسانی ہیں

    دور رہنا کوئی کمال نہیں پاس آؤ تو کوئی بات بنے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    محمد رفیع

    محمد رفیع

    مآخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Sahir Ludhianvi (Pg. 357)
    • Author : SAHIR LUDHIANVI
    • مطبع : Farid Book Depot (Pvt.) Ltd

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY