پکار لیں گے اس کو اتنا آسرا تو چاہئے

رئیس فراز

پکار لیں گے اس کو اتنا آسرا تو چاہئے

رئیس فراز

MORE BYرئیس فراز

    پکار لیں گے اس کو اتنا آسرا تو چاہئے

    دعا خلاف وضع ہے مگر خدا تو چاہئے

    بجا کہ میں نے زندگی سے کھائے ہیں بہت فریب

    مگر فریب کھانے کو بھی حوصلہ تو چاہئے

    میں اپنے عکس کی تلاش کس کے چہرے میں کروں

    مجھے بھی زیست نام کا اک آئنا تو چاہئے

    نہ اس کے پاس وقت ہے نہ مجھ کو فرصت نظر

    جنوں کے واسطے بھی کوئی سلسلہ تو چاہئے

    چمن کو مجھ سے ضد سہی گلوں کی بات اور ہے

    صبا کے ہاتھ اک پیام بھیجنا تو چاہئے

    یہ کیا کہ سر جھکا کے خنجروں کو چومتے رہیں

    ستم گروں کو کچھ نہیں تو ٹوکنا تو چاہئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY