پوچھا کہ وجہ زندگی بولے کہ دل داری مری

مضطر خیرآبادی

پوچھا کہ وجہ زندگی بولے کہ دل داری مری

مضطر خیرآبادی

MORE BYمضطر خیرآبادی

    پوچھا کہ وجہ زندگی بولے کہ دل داری مری

    پوچھا کہ مرنے کا سبب بولے جفا کاری مری

    پوچھا کہ دل کو کیا کہوں بولے کہ دیوانہ مرا

    پوچھا کہ اس کو کیا ہوا بولے کہ بیماری مری

    پوچھا ستا کے رنج کیوں بولے کہ پچھتانا پڑا

    پوچھا کہ رسوا کون ہے بولے دل آزاری مری

    پوچھا کہ دوزخ کی جلن بولے کہ سوز دل ترا

    پوچھا کہ جنت کی پھبن بولے طرح داری مری

    پوچھا کہ مضطرؔ کیوں کیا بولے کہ دل چاہا مرا

    پوچھا تسلی کون دے بولے کہ غم خواری مری

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY