پوچھے گا جو وہ رشک قمر حال ہمارا

حاتم علی مہر

پوچھے گا جو وہ رشک قمر حال ہمارا

حاتم علی مہر

MORE BYحاتم علی مہر

    پوچھے گا جو وہ رشک قمر حال ہمارا

    اے مہرؔ چمک جائے گا اقبال ہمارا

    سودے میں تری زلف کے لکھتے ہیں جو اشعار

    ہوتا ہے سیہ نامۂ اعمال ہمارا

    ابرو کا اشارہ کیا تم نے تو ہوئی عید

    اے جان یہی ہے مہ شوال ہمارا

    ہر بار دکھاتا ہے جنوں خانۂ زنجیر

    اس گھر میں گزارا ہوا ہر سال ہمارا

    آتے ہی وہ کہتے ہیں کہ جاتے ہیں بس اب ہم

    بے چپن ہیں منگوایئے سکھ پال ہمارا

    مضموں نہ بندھا موئے کمر کا تو وہ بولے

    ٹیڑھا نہ ہوا شاعروں سے بال ہمارا

    مہتاب سے کہتا ہے مرا چاند کا ٹکڑا

    رخسار ترا صاف ہے یا گال ہمارا

    تم عرش ہلاتے ہو قدم رکھ کے زمیں پر

    اس چال سے دل ہو گیا پامال ہمارا

    اک پل بھی جدا دیدۂ تر سے نہیں ہوتا

    اب آنکھ کا پردہ ہوا رومال ہمارا

    یاں روح پہ ہوتا ہے اس آواز کا صدمہ

    جی لے گا شب وصل میں گھڑیال ہمارا

    یاں گنج معانی ہے تو واں سیم و زر اے مہرؔ

    دولت وہ بخیلوں کی ہے یہ مال ہمارا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY