قبائے جاں پرانی ہو گئی کیا

نسیم سحر

قبائے جاں پرانی ہو گئی کیا

نسیم سحر

MORE BYنسیم سحر

    قبائے جاں پرانی ہو گئی کیا

    حقیقت بھی کہانی ہو گئی کیا

    فسردہ پھر ہے اس بستی کا موسم

    کہیں پھر ناگہانی ہو گئی کیا

    دیے اب شہر میں روشن نہیں ہیں

    ہوا کی حکمرانی ہو گئی کیا

    روابط دھوپ سے ہیں اب تمہارے

    بہت بے سائبانی ہو گئی کیا

    نسیمؔ اس شخص سے محروم ہو کر

    تری جادو بیانی ہو گئی کیا

    مأخذ :
    • کتاب : Aiwan (Pg. 109)
    • Author : Manazir Ashiq Harganvi & Shahid Nayeem
    • مطبع : Nirali Duniya (1998)
    • اشاعت : 1998

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے