قدم انساں کا راہ دہر میں تھرا ہی جاتا ہے

جوشؔ ملیح آبادی

قدم انساں کا راہ دہر میں تھرا ہی جاتا ہے

جوشؔ ملیح آبادی

MORE BYجوشؔ ملیح آبادی

    قدم انساں کا راہ دہر میں تھرا ہی جاتا ہے

    چلے کتنا ہی کوئی بچ کے ٹھوکر کھا ہی جاتا ہے

    نظر ہو خواہ کتنی ہی حقائق آشنا پھر بھی

    ہجوم کشمکش میں آدمی گھبرا ہی جاتا ہے

    خلاف مصلحت میں بھی سمجھتا ہوں مگر ناصح

    وہ آتے ہیں تو چہرے پر تغیر آ ہی جاتا ہے

    ہوائیں زور کتنا ہی لگائیں آندھیاں بن کر

    مگر جو گھر کے آتا ہے وہ بادل چھا ہی جاتا ہے

    شکایت کیوں اسے کہتے ہو یہ فطرت ہے انساں کی

    مصیبت میں خیال عیش رفتہ آ ہی جاتا ہے

    شگوفوں پر بھی آتی ہیں بلائیں یوں تو کہنے کو

    مگر جو پھول بن جاتا ہے وہ کمھلا ہی جاتا ہے

    سمجھتی ہیں مآل گل مگر کیا زور فطرت ہے

    سحر ہوتے ہی کلیوں کو تبسم آ ہی جاتا ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    قدم انساں کا راہ دہر میں تھرا ہی جاتا ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY