قدم یوں بے خطر ہو کر نہ مے خانے میں رکھ دینا

واصف دہلوی

قدم یوں بے خطر ہو کر نہ مے خانے میں رکھ دینا

واصف دہلوی

MORE BYواصف دہلوی

    قدم یوں بے خطر ہو کر نہ مے خانے میں رکھ دینا

    بہت مشکل ہے جان و دل کو نذرانے میں رکھ دینا

    سنا ہے حضرت واعظ ادھر تشریف لائیں گے

    ذرا اس کاسۂ گردوں کو مے خانے میں رکھ دینا

    بتوں کے دل میں یوں شاید خدا کا خوف پیدا ہو

    یہ میرے دل کے ٹکڑے جا کے بت خانے میں رکھ دینا

    یہاں اے دل فرشتوں کا بھی زہرہ آب ہوتا ہے

    قدم آساں نہیں الفت کے ویرانے میں رکھ دینا

    چلا ہے گھر کو دیوانہ اڑا کر خاک صحرا کی

    غبار خاطر احباب کاشانے میں رکھ دینا

    زیارت کو وہ دشت نجد کا جاں باز آئے گا

    ذرا دم بھر کو میری نعش ویرانے میں رکھ دینا

    بفیض حضرت ناصح ہوئی توفیق توبہ کی

    مرا جام شکستہ ان کے شکرانے میں رکھ دینا

    منافی تھا یہ اے منصور دستور امانت کے

    کسی کی بات کو یوں اپنے بیگانے میں رکھ دینا

    پلائی ہے جو واصفؔ کو مے مرد آزما ساقی

    تو کچھ شان خودی بھی اپنے دیوانے میں رکھ دینا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY