قفس سے چھوٹنے کی کب ہوس ہے

تاباں عبد الحی

قفس سے چھوٹنے کی کب ہوس ہے

تاباں عبد الحی

MORE BYتاباں عبد الحی

    قفس سے چھوٹنے کی کب ہوس ہے

    تصور بھی چمن کا ہم کو بس ہے

    بجائے رخنۂ دیوار گلشن

    ہمیں صیاد اب چاک قفس ہے

    فغاں کرتا ہی رہتا ہے یہ دن رات

    الٰہی دل ہے میرا یا جرس ہے

    کٹیں گے عمر کے دن کب کے بے یار

    مجھے اک اک گھڑی سو سو برس ہے

    ہماری داد کے تئیں کون پہنچے

    نہ کوئی مونس نہ کوئی فریاد رس ہے

    گلی میں یار کی ہو جائیے خاک

    مرے دل میں یہ مدت سے ہوس ہے

    سفر دنیا سے کرنا کیا ہے تاباںؔ

    عدم ہستی سے راہ یک نفس ہے

    مأخذ :
    • Deewan-e-Taban Rekhta Website)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY