قہر برسا آسماں سے تب پشیمانی ہوئی

بلال سہارن پوری

قہر برسا آسماں سے تب پشیمانی ہوئی

بلال سہارن پوری

MORE BYبلال سہارن پوری

    قہر برسا آسماں سے تب پشیمانی ہوئی

    بھول بیٹھے ہم خدا کو ہم سے نادانی ہوئی

    کیا حسیں رونق یہاں تھی کس قدر آباد تھا

    آج اپنے شہر کو دیکھا تو حیرانی ہوئی

    جی رہی ہیں خوف کے سائے میں وہ ان دنوں

    صورتیں دنیا میں تھیں جو جانی پہچانی ہوئی

    ہو گئے ہیں مندر و مسجد کے دروازے بھی بند

    ساری دنیا پر مسلط کیسی ویرانی ہوئی

    جی حضوری کر نہ پائے حکم پر اس کے بلالؔ

    بادشاہ وقت کی ہم سے نہ دربانی ہوئی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY