قید کون و مکان سے نکلا

اقبال آصف

قید کون و مکان سے نکلا

اقبال آصف

MORE BYاقبال آصف

    قید کون و مکان سے نکلا

    ہر نفس امتحان سے نکلا

    میں بجھا بھی تو میرے بعد یہاں

    اک دھواں کیسی شان سے نکلا

    منزل گمشدہ سراغ ترا

    پاؤں کے اک نشان سے نکلا

    شکر ہے اس کی یاد کا پیکر

    میرے وہم و گمان سے نکلا

    ایک ٹھوکر پہ نور کا دریا

    شب کی اندھی چٹان سے نکلا

    بوکھلائی ہوا کہ طائر نو

    کتنی اونچی اڑان سے نکلا

    آگ پانی ہوا اور مٹی کے

    آصفؔ ہر امتحان سے نکلا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے