قیدی ہوں سر زلف گرہ گیر سے پہلے

منیرؔ  شکوہ آبادی

قیدی ہوں سر زلف گرہ گیر سے پہلے

منیرؔ  شکوہ آبادی

MORE BYمنیرؔ  شکوہ آبادی

    قیدی ہوں سر زلف گرہ گیر سے پہلے

    پابند ہوں پیدائش زنجیر سے پہلے

    سرگشتہ ہوں دور فلک پیر سے پہلے

    گردش میں ہوں میں گردش تقدیر سے پہلے

    کیا لاتی ہے تیری نگہ قہر کا مژدہ

    دوڑے ہوئے آتی ہے اجل تیر سے پہلے

    نالوں سے انہیں ہوتی ہے نفرت عوض لطف

    تقدیر بگڑ جاتی ہے تدبیر سے پہلے

    مارا ہے مجھے خنجر ابرو سے کسی نے

    نہلائیو آب دم شمشیر سے پہلے

    گھر سے ترے دیوانے نے جب پاؤں نکالا

    چھالوں نے قدم لے لئے زنجیر سے پہلے

    کس طرح کہوں آپ کے ہونٹوں کی حلاوت

    لب بند ہوئے جاتے ہیں تقریر سے پہلے

    پابند غم زلف کا مرنا نہ چھپے گا

    پہنچے گی خبر نالۂ زنجیر سے پہلے

    کس حوصلہ پر طالب دیدار ہے عالم

    آنکھیں تو لڑا لے کوئی تصویر سے پہلے

    بے تاب ہوئے یار کی چٹکی سے نکل کر

    تیر آپ تڑپنے لگے نخچیر سے پہلے

    پانے کی نہیں دل کا ٹھکانا خلش غم

    جب تک نہ پتا پوچھے ترے تیر سے پہلے

    گھبرانے سے کیا کام منیرؔ جگر افکار

    تو عرض تو کر حضرت شبیر سے پہلے

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY