قسم خدا کی بلندی سے گفتگو کرتے

نواز عصیمی

قسم خدا کی بلندی سے گفتگو کرتے

نواز عصیمی

MORE BYنواز عصیمی

    قسم خدا کی بلندی سے گفتگو کرتے

    اڑان بھرنے سے پہلے اگر وضو کرتے

    فنا کا خوف رہا رات بھر محلے پر

    فقیر گزرے تھے کل شام اللہ ہو کرتے

    ہمارے سایہ زمینوں میں دھنس چکے تھے یہاں

    سفر کا عزم بھلا کیسے چار سو کرتے

    کسی پے دھوپ کے چلکے نہ ڈالتے ہرگز

    اک آئنہ بھی اگر خود کے رو بہ رو کرتے

    جھکی جبین کا معیار بڑھ گیا ہوتا

    گر اپنے آپ کو مسجود قبلہ رو کرتے

    ابھی ہوئی ہیں کہاں پتھروں کی برساتیں

    ابھی سے پھرنے لگے کیوں لہو لہو کرتے

    جو لوگ موم کی دستار باندھے پھرتے ہے

    ذرا سی دیر تو سورج سے گفتگو کرتے

    کرن کے دھاگے کا ہم کو اگر سرا ملتا

    ہوائیں سیتے خلاؤں کو ہم رفو کرتے

    نوازؔ اس لیے خاموشیوں سے لپٹے ہیں

    زبان کھلتی تو پیدا نئے عدو کرتے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے