قصر جاناں تک رسائی ہو کسی تدبیر سے

بیدم شاہ وارثی

قصر جاناں تک رسائی ہو کسی تدبیر سے

بیدم شاہ وارثی

MORE BYبیدم شاہ وارثی

    قصر جاناں تک رسائی ہو کسی تدبیر سے

    طائر جاں کے لیے پر مانگ لوں میں تیر سے

    ان کو کیا دھوکا ہوا مجھ ناتواں کو دیکھ

    میری صورت کیوں ملاتے ہیں مری تصویر سے

    گالیاں دے کر بجائے قم کے اے رشک مسیح

    آپ نے مردے جلائے ہیں نئی تدبیر سے

    صدقے اے قاتل ترے مجھ تشنۂ دیدار کی

    تشنگی جاتی رہی آب دم شمشیر سے

    عشوے سے غمزے سے شوخی سے ادا سے ناز سے

    مٹنے والا ہوں مٹا دیجے کسی تدبیر سے

    اک سوال وصل پر دو دو سزائیں دیں مجھے

    تیغ سے کاٹا زباں کو سی دئے لب تیر سے

    کچھ نہ ہو اے انقلاب آسماں اتنا تو ہو

    غیر کی قسمت بدل جائے میری تقدیر سے

    زندگی سے کیوں نہ ہو نفرت کہ محو زلف ہوں

    قید ہستی مجھ کو بیدمؔ کم نہیں زنجیر سے

    مأخذ :
    • کتاب : jigar parah armagaan bedam shaah (Pg. 41)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے