قرطاس و قلم ہاتھ میں ہے اور شب مہ ہے

محمد اظہار الحق

قرطاس و قلم ہاتھ میں ہے اور شب مہ ہے

محمد اظہار الحق

MORE BYمحمد اظہار الحق

    قرطاس و قلم ہاتھ میں ہے اور شب مہ ہے

    اے رب ازل کھول دے جو دل میں گرہ ہے

    اطراف سے ہر شب سمٹ آتی ہے سفیدی

    ہر صبح جبیں پر مگر اک روز سیہ ہے

    میں شام سے پہلے ہی پہنچ جاؤں تو بہتر

    جنگل میں ہوں اور سر پہ مرے بار گنہ ہے

    مہنگی ہے جہاں دھات مرے سرخ لہو سے

    زردی کے اس آشوب میں تو میری پنہ ہے

    منہ زور زمانوں کی ذرا کھینچ لے باگیں

    میرے کسی بچھڑے ہوئے کی سالگرہ ہے

    مآخذ:

    • کتاب : meyaar (Pg. 388)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY