راہ دشوار بھی ہے بے سر و سامانی بھی

ابرار احمد

راہ دشوار بھی ہے بے سر و سامانی بھی

ابرار احمد

MORE BYابرار احمد

    راہ دشوار بھی ہے بے سر و سامانی بھی

    اور اس دل کو ہے کچھ اور پریشانی بھی

    یہ جو منظر ترے آگے سے سرکتا ہی نہیں

    اس میں شامل ہے تری آنکھ کی حیرانی بھی

    اپنے مجبور پہ کچھ اور کرم ہو کہ اسے

    کم پڑی جاتی ہے اب غم کی فراوانی بھی

    صرف افسوس کا سایہ ہی نہیں ہے ہم پر

    ہم کہ ہیں خواب تب و تاب کے زندانی بھی

    بے نیازی کی وہ خو جیسے کبھی تھی ہی نہیں

    خواب تھے جیسے وہ ایام تن آسانی بھی

    رہ تری چھوڑ کے کیوں جانب دنیا آئے

    ہم کو جینے نہیں دیتی یہ پشیمانی بھی

    مأخذ :
    • کتاب : Ghazal Calendar-2015 (Pg. 08.01.2015)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے