راستے جو بھی چمک دار نظر آتے ہیں

زبیر علی تابش

راستے جو بھی چمک دار نظر آتے ہیں

زبیر علی تابش

MORE BYزبیر علی تابش

    راستے جو بھی چمک دار نظر آتے ہیں

    سب تیری اوڑھنی کے تار نظر آتے ہیں

    کوئی پاگل ہی محبت سے نوازے گا مجھے

    آپ تو خیر سمجھ دار نظر آتے ہیں

    میں کہاں جاؤں کروں کس سے شکایت اس کی

    ہر طرف اس کے طرفدار نظر آتے ہیں

    زخم بھرنے لگے ہیں پچھلی ملاقاتوں کے

    پھر ملاقات کے آثار نظر آتے ہیں

    ایک ہی بار نظر پڑتی ہے ان پر تابشؔ

    اور پھر وہ ہی لگاتار نظر آتے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    speakNow