راستے زیست کے دشوار نظر آتے ہیں

جوہر زاہری

راستے زیست کے دشوار نظر آتے ہیں

جوہر زاہری

MORE BY جوہر زاہری

    راستے زیست کے دشوار نظر آتے ہیں

    لوگ الفت سے بھی بیزار نظر آتے ہیں

    جس کو دیکھو وہ خریدار ہوا ہے ان کا

    ہر طرف مصر کے بازار نظر آتے ہیں

    بل ہے ابرو پہ نظر تیز خدا خیر کرے

    آج کچھ حشر کے آثار نظر آتے ہیں

    منزل عشق کی راہیں ہیں بہت ہی دشوار

    ہر قدم پر نئے آزار نظر آتے ہیں

    کیا کہوں اک ترے جلوے کے مقابل اے دوست

    چشم و دل دونوں ہی بیکار نظر آتے ہیں

    یاد آ جاتے ہیں وہ جب بھی ہمیں اے جوہرؔ

    ہر طرف مطلع انوار نظر آتے ہیں

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY