راستوں میں اک نگر آباد ہے

سحر انصاری

راستوں میں اک نگر آباد ہے

سحر انصاری

MORE BYسحر انصاری

    راستوں میں اک نگر آباد ہے

    اس تصور ہی سے گھر آباد ہے

    کیسی کیسی صورتیں گم ہو گئیں

    دل کسی صورت مگر آباد ہے

    کیسی کیسی محفلیں سونی ہوئیں

    پھر بھی دنیا کس قدر آباد ہے

    زندگی پاگل ہوا کے ساتھ ساتھ

    مثل خاک رہ گزر آباد ہے

    دشت و صحرا ہو چکے قدموں کی گرد

    شہر اب تک دوش پر آباد ہے

    بے خودی رسوا تو کیا کرتی مجھے

    مجھ میں کوئی بے خبر آباد ہے

    دھوپ بھی سنولا گئی ہے جس جگہ

    اس خرابے میں سحر آباد ہے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    سحر انصاری

    سحر انصاری

    مآخذ
    • کتاب : Range-e-Gazal (Pg. 234)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY