رات بھی ہم نے رو رو کاٹی دن بھی سو کے خراب کیا

کاوش بدری

رات بھی ہم نے رو رو کاٹی دن بھی سو کے خراب کیا

کاوش بدری

MORE BYکاوش بدری

    رات بھی ہم نے رو رو کاٹی دن بھی سو کے خراب کیا

    کھلنے والی آنکھوں کو بھی عمداً محو خواب کیا

    ایک ہی روٹی کو دھو دھو کر پیتے رہے ہم شام و سحر

    ساری عمر میں شاید ہم نے ایک ہی کار ثواب کیا

    رزق تو ہے مقسوم ہمارا اس کو دعا کی حاجت کیوں

    ڈھانک کے چہرہ دست دعا سے ہم نے خود سے خطاب کیا

    اس کی نظر سے تیر جو نکلا ٹھیک نشانے پر بیٹھا

    گھائل آہو بن کر ہم نے بن بن کو شاداب کیا

    اشک بہا دینے کے ہنر میں ثانی اس کا کوئی نہیں

    اک دن ہنستے ہنستے اس نے سب کو تہہ سیلاب کیا

    بچپن میں دیکھا تھا ہم نے ماں کا چہرہ یاد نہیں

    بوعلی سینا بن کر ہم نے اس کے رخ کو کتاب کیا

    مأخذ :
    • کتاب : Shabkhoon (Urdu Monthly) (Pg. 1573)
    • Author : Shamsur Rahman Faruqi
    • مطبع : Shabkhoon Po. Box No.13, 313 rani Mandi Allahabad (June December 2005áIssue No. 293 To 299âPart II)
    • اشاعت : June December 2005áIssue No. 293 To 299âPart II

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY