رات دیکھا تھا بھاگتا جنگل

احمد سجاد بابر

رات دیکھا تھا بھاگتا جنگل

احمد سجاد بابر

MORE BYاحمد سجاد بابر

    رات دیکھا تھا بھاگتا جنگل

    ایک وحشت میں ہانپتا جنگل

    اک شکاری نے فاختہ ماری

    درد مارے تھا کانپتا جنگل

    مجھ کو اپنا ہی خوف ہے صاحب

    میرے اندر ہے جاگتا جنگل

    بارشوں میں دھمال پڑتی ہے

    بوند پی کر ہے ناچتا جنگل

    کس نے بوئے ہیں صحن میں کانٹے

    کون گھر گھر ہے بانٹتا جنگل

    رات بستی میں پھر اترتی ہے

    پہلے اس کو ہے پالتا جنگل

    اب درندے ہیں شہر میں پھرتے

    کاش بابرؔ نہ کاٹتا جنگل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY