رات گزری نہ کم ستارے ہوئے

ذوالفقار عادل

رات گزری نہ کم ستارے ہوئے

ذوالفقار عادل

MORE BYذوالفقار عادل

    رات گزری نہ کم ستارے ہوئے

    منکشف ہم پہ ہجر سارے ہوئے

    ناؤ دو لخت ہو گئی اک دن

    دو مسافر تھے دو کنارے ہوئے

    پھول دلدل میں کھل رہا ہے یہاں

    ہم ہیں اک جسم پر اتارے ہوئے

    جانے کس وقت نیند آئی ہمیں

    جانے کس وقت ہم تمہارے ہوئے

    مدتوں بعد کام آئے ہیں

    چند لمحے کہیں گزارے ہوئے

    اپنی چھت پر اداس بیٹھے ہیں

    ہم پرندوں کا روپ دھارے ہوئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY