رات پھر رنگ پہ تھی اس کے بدن کی خوشبو

احمد مشتاق

رات پھر رنگ پہ تھی اس کے بدن کی خوشبو

احمد مشتاق

MORE BYاحمد مشتاق

    رات پھر رنگ پہ تھی اس کے بدن کی خوشبو

    دل کی دھڑکن تھی کہ اڑتے تھے لہو میں جگنو

    جیسے ہر شے ہو کسی خواب فراموش میں گم

    چاند چمکا نہ کسی یاد نے بدلا پہلو

    صبح کے زینۂ خاموش پہ قدموں کے گلاب

    شام کی بند حویلی میں ہنسی کا جادو

    صحن کے سبز اندھیرے میں دمکتے رخسار

    صاف بستر کے اجالے میں چمکتے گیسو

    جھلملاتے رہے وہ خواب جو پورے نہ ہوئے

    درد بیدار ٹپکتا رہا آنسو آنسو

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    رات پھر رنگ پہ تھی اس کے بدن کی خوشبو نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY