ربط ہر بزم سے ٹوٹے تری محفل کے سوا

بشر نواز

ربط ہر بزم سے ٹوٹے تری محفل کے سوا

بشر نواز

MORE BYبشر نواز

    ربط ہر بزم سے ٹوٹے تری محفل کے سوا

    رنجشیں سب کی گوارا ہیں ترے دل کے سوا

    ایسے پہلو میں سما جاؤ کہ جیسے دل ہو

    چین ملتا ہے کہاں موج کو ساحل کے سوا

    چیخ ٹکرا کے پہاڑوں سے پلٹ آتی ہے

    کون سہتا ہے بھلا وار مقابل کے سوا

    خشک پتوں سے چھڑا لیتی ہیں شاخیں دامن

    کس نے یادوں سے نبھائی ہے یہاں دل کے سوا

    ایک بچھڑے ہوئے سائے کے تعاقب میں بشرؔ

    سبھی راہوں پہ گئے ہم رہ منزل کے سوا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY