رہ سفر میں رہے اور حیات سے گزرے

عبید الرحمان

رہ سفر میں رہے اور حیات سے گزرے

عبید الرحمان

MORE BYعبید الرحمان

    رہ سفر میں رہے اور حیات سے گزرے

    کہ ایک رنگ میں کتنے جہات سے گزرے

    بڑے سکون سے ہم احتیاط سے گزرے

    قدم جما کے چلے کائنات سے گزرے

    ہے کوئی عزم جواں اور نہ کچھ جنوں خیزی

    بے دست و پا ہی رہے ممکنات سے گزرے

    یقین دل میں رہا تیری دل ربائی کا

    سو جاگ جاگ کے ہم ساری رات سے گزرے

    کوئی نتیجہ کہاں بات کا نکل پایا

    کہ ایک بات ہی کیا بات بات سے گزرے

    تغیرات کی دنیا میں ہم رہے ہر دم

    کہ سوتے جاگتے ہم بھی حیات سے گزرے

    کبھی نہ خود کو کیا وقف انہماک وجود

    عبیدؔ بچ کے رہے حادثات سے گزرے

    مأخذ :
    • کتاب : سخن دریا (Pg. 99)
    • Author : عبید الرحمن
    • مطبع : عرشیہ پبلی کیشن

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY