رہ رواں کہتے ہیں جس کو جرس محمل ہے

بقا اللہ بقاؔ

رہ رواں کہتے ہیں جس کو جرس محمل ہے

بقا اللہ بقاؔ

MORE BYبقا اللہ بقاؔ

    رہ رواں کہتے ہیں جس کو جرس محمل ہے

    محنت‌ راہ سے نالاں وہ ہمارا دل ہے

    موج سے بیش نہیں ہستیٔ وہمی کی نمود

    صفحۂ دہر پہ گویا یہ خط باطل ہے

    کچھ تعین نہیں اس راہ میں جوں ریگ رواں

    جس جگہ بیٹھ گئے اپنی وہی منزل ہے

    آستیں حشر کے دن خون سے تر ہو جس کی

    یہ یقیں جانیو اس کو کہ مرا قاتل ہے

    کھول دو عقدۂ کونین بقاؔ کے پل میں

    یا علیؑ تم کو یہ آساں ہے اسے مشکل ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Noquush (Pg. B-390 E-400)
    • مطبع : Nuqoosh Press Lahore (May June 1954)
    • اشاعت : May June 1954

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے