رہا پیش نظر حسرت کا باب اول سے آخر تک

جوشؔ ملسیانی

رہا پیش نظر حسرت کا باب اول سے آخر تک

جوشؔ ملسیانی

MORE BY جوشؔ ملسیانی

    رہا پیش نظر حسرت کا باب اول سے آخر تک

    پڑھی کس نے محبت کی کتاب اول سے آخر تک

    اشارہ تک نہ لکھا کوئی اس نے ربط باہم کا

    بہت بے ربط ہے خط کا جواب اول سے آخر تک

    میسر خاک ہوتا زندگی میں لطف تنہائی

    رہے دو دو فرشتے ہم رکاب اول سے آخر تک

    خوشی میں بھی محبت دشمن صبر و سکوں نکلی

    رہا دل میں وہی اک اضطراب اول سے آخر تک

    غلط کوشی کی عادت نے اثر پیدا کیا ایسا

    غلط نکلا گناہوں کا حساب اول سے آخر تک

    مجھے لے آئی ہے عمر رواں کن خارزاروں میں

    ہوا ہے چاک دامان شباب اول سے آخر تک

    مجال گفتگو پائی تو اب کیوں مہر بر لب ہے

    سنا دے او دل غفلت مآب اول سے آخر تک

    اندھیرے میں تلاش دل اگر ہوتی تو کیا ہوتی

    شب تاریک تھا دور شباب اول سے آخر تک

    دہان زخم سے بھی جوشؔ حال دل سنا دیکھا

    نمک پاشی ہی تھا ان کا جواب اول سے آخر تک

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY