Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

رئیسؔ اشکوں سے دامن کو بھگو لیتے تو اچھا تھا

رئیس امروہوی

رئیسؔ اشکوں سے دامن کو بھگو لیتے تو اچھا تھا

رئیس امروہوی

MORE BYرئیس امروہوی

    رئیسؔ اشکوں سے دامن کو بھگو لیتے تو اچھا تھا

    حضور دوست کچھ گستاخ ہو لیتے تو اچھا تھا

    جدائی میں یہ شرط ضبط غم تو مار ڈالے گی

    ہم ان کے سامنے کچھ دیر رو لیتے تو اچھا تھا

    بہاروں سے نہیں جن کو توقع لالہ و گل کی

    وہ اپنے واسطے کانٹے ہی بو لیتے تو اچھا تھا

    ابھی تو نصف شب ہے انتظار صبح نو کیسا

    دل بیدار ہم کچھ دیر سو لیتے تو اچھا تھا

    قلمرو داد خون و اشک لکھنے سے جھجکتا ہے

    قلم کو اشک و خوں ہی میں ڈبو لیتے تو اچھا تھا

    فقط اک گریۂ شبنم کفایت کر نہیں سکتا

    چمن والے کبھی جی بھر کے رو لیتے تو اچھا تھا

    سراغ کارواں تک کھو گیا اب سوچتے یہ ہیں

    کہ گرد کارواں کے ساتھ ہو لیتے تو اچھا تھا

    مأخذ:

    Hikayat-e-ne (Pg. 55)

    • مصنف: Rais Amrohvi
      • اشاعت: 1975
      • ناشر: Rais Acadami, Garden Est, krachis
      • سن اشاعت: 1975

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے