رکھے ہے رنگ کچھ ساقی شراب ناب آتش کا

ممنونؔ نظام الدین

رکھے ہے رنگ کچھ ساقی شراب ناب آتش کا

ممنونؔ نظام الدین

MORE BYممنونؔ نظام الدین

    رکھے ہے رنگ کچھ ساقی شراب ناب آتش کا

    مقطر کیا کیا لے کر گل شاداب آتش کا

    مرے یہ گرم آنسو پونچھ مت دست نگاریں سے

    کہ ان آنکھوں سے رہتا ہے رواں سیلاب آتش کا

    تہ مژگاں نہاں رکھتے ہیں ہم لخت دل سوزاں

    یہاں خاشاک میں رکھا ہے اخگر داب آتش کا

    نگاہ گرم سے اس کی دل بیتاب روکش ہے

    حریف آخر ہوا یہ پارۂ سیماب آتش کا

    جو سیل اشک و آہ گرم کو ٹک دیجیے رخصت

    نشاں دریا کا گم ہو نام ہو نایاب آتش کا

    شکیب و تاب و ہوش و صبر سوز غم سے سب سلگا

    ہوا طعمہ غرض اپنا تمام اسباب آتش کا

    عرق اس شعلہ گوں عارض پہ کیا صنع الٰہی ہے

    نہیں دیکھا ہے ہم نے ربط باہم آب آتش کا

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    رکھے ہے رنگ کچھ ساقی شراب ناب آتش کا فصیح اکمل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY