رنج و غم مانگے ہے اندوہ و بلا مانگے ہے

جاں نثاراختر

رنج و غم مانگے ہے اندوہ و بلا مانگے ہے

جاں نثاراختر

MORE BY جاں نثاراختر

    رنج و غم مانگے ہے اندوہ و بلا مانگے ہے

    دل وہ مجرم ہے کہ خود اپنی سزا مانگے ہے

    چپ ہے ہر زخم گلو چپ ہے شہیدوں کا لہو

    دست قاتل ہے جو محنت کا صلہ مانگے ہے

    تو بھی اک دولت نایاب ہے پر کیا کہیے

    زندگی اور بھی کچھ تیرے سوا مانگے ہے

    کھوئی کھوئی یہ نگاہیں یہ خمیدہ پلکیں

    ہاتھ اٹھائے کوئی جس طرح دعا مانگے ہے

    راس اب آئے گی اشکوں کی نہ آہوں کی فضا

    آج کا پیار نئی آب و ہوا مانگے ہے

    بانسری کا کوئی نغمہ نہ سہی چیخ سہی

    ہر سکوت شب غم کوئی صدا مانگے ہے

    لاکھ منکر سہی پر ذوق پرستش میرا

    آج بھی کوئی صنم کوئی خدا مانگے ہے

    سانس ویسے ہی زمانے کی رکی جاتی ہے

    وہ بدن اور بھی کچھ تنگ قبا مانگے ہے

    دل ہر اک حال سے بیگانہ ہوا جاتا ہے

    اب توجہ نہ تغافل نہ ادا مانگے ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY