روشن ہزار چند ہیں شمس و قمر سے آپ

امداد علی بحر

روشن ہزار چند ہیں شمس و قمر سے آپ

امداد علی بحر

MORE BYامداد علی بحر

    روشن ہزار چند ہیں شمس و قمر سے آپ

    غائب ہیں پر نگاہ کی صورت نظر سے آپ

    آنکھیں بچھاتے پھرتے ہیں مشتاق راہ میں

    کیا جانیے گزرتے ہیں کس رہ گزر سے آپ

    روئے کوئی غریب تو ہنسنا نہ چاہئے

    واقف نہیں کسی کے فغان اثر سے آپ

    کانٹے بھرے ہیں خط میں جو چھوتے نہیں اسے

    اتنا نہ ہاتھ کھینچیے میری خبر سے آپ

    رہ گیر کیوں تڑپتے ہیں تشویش تھی مجھے

    اب کھل گیا کہ جھانکتے ہیں چاک در سے آپ

    حمام نے تو اور بھی چمکا دیا بدن

    گویا نہا کے نکلے ہیں آب گہر سے آپ

    لائیں گے راہ پر یہ رخ و زلف ایک دن

    دیکھیں گے شام تک مرا رستہ سحر سے آپ

    آنکھوں کی طرح رونے لگیں روزن مکاں

    پوچھیں ہمارا حال جو دیوار و در سے آپ

    مریخ پن مزاج میں اعضا میں نازکی

    تیغ شعاع باندھئے اپنی کمر سے آپ

    اے زاہدان خشک یہ غیرت کا ہے مقام

    آگاہ آج تک نہیں خالق کے گھر سے آپ

    ظاہر ہے مرغ قبلہ نما بھی گواہ ہے

    کعبے کی سمت پوچھتے ہیں جانور سے آپ

    کیوں کر ملک کہوں کہ ملک خادم آپ کے

    ہیں وہ بشر کہ ملتی ہیں خیر البشر سے آپ

    جو بات آپ کی ہے مشیت خدا کی ہے

    بے شبہ مختلط ہیں قضا و قدر سے آپ

    پھسلا ہے میرے آنسوؤں میں پاؤں آپ کا

    بندے کا سر اتارئیے آج اپنے سر سے آپ

    اے بحرؔ رحم کھائے گا وہ رونے پر ضرور

    دھو رکھئے اپنے منہ کو ذرا چشم تر سے آپ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY