رواںؔ کس کو خبر عنوان آغاز جہاں کیا تھا

جگت موہن لال رواں

رواںؔ کس کو خبر عنوان آغاز جہاں کیا تھا

جگت موہن لال رواں

MORE BY جگت موہن لال رواں

    رواںؔ کس کو خبر عنوان آغاز جہاں کیا تھا

    زمیں کا کیا تھا نقشہ اور رنگ آسماں کیا تھا

    یہی ہستی اسی ہستی کے کچھ ٹوٹے ہوئے رشتے

    وگرنہ ایسا پردہ میرے ان کے درمیاں کیا تھا

    ترا بخشا ہوا دل اور دل کی یہ ہوسکاری

    مرا اس میں قصور اے دستگیر عاصیاں کیا تھا

    اگر کچھ روز زندہ رہ کے مر جانا مقدر ہے

    تو اس دنیا میں آخر باعث تخلیق جاں کیا تھا

    ہم اتنے فاصلے پر آ گئے ہیں عہد ماضی سے

    خبر یہ بھی نہیں اجداد کا نام و نشاں کیا تھا

    کسی برق تجلی پر ذرا سا غور کر لینا

    اگر یہ جاننا ہو عالم روح رواںؔ کیا تھا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    رواںؔ کس کو خبر عنوان آغاز جہاں کیا تھا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY