ریت کی صورت جاں پیاسی تھی آنکھ ہماری نم نہ ہوئی

ساقی فاروقی

ریت کی صورت جاں پیاسی تھی آنکھ ہماری نم نہ ہوئی

ساقی فاروقی

MORE BY ساقی فاروقی

    ریت کی صورت جاں پیاسی تھی آنکھ ہماری نم نہ ہوئی

    تیری درد گساری سے بھی روح کی الجھن کم نہ ہوئی

    شاخ سے ٹوٹ کے بے حرمت ہیں ویسے بھی بے حرمت تھے

    ہم گرتے پتوں پہ ملامت کب موسم موسم نہ ہوئی

    ناگ پھنی سا شعلہ ہے جو آنکھوں میں لہراتا ہے

    رات کبھی ہمدم نہ بنی اور نیند کبھی مرہم نہ ہوئی

    اب یادوں کی دھوپ چھاؤں میں پرچھائیں سا پھرتا ہوں

    میں نے بچھڑ کر دیکھ لیا ہے دنیا نرم قدم نہ ہوئی

    میری صحرا زاد محبت ابر سیہ کو ڈھونڈھتی ہے

    ایک جنم کی پیاسی تھی اک بوند سے تازہ دم نہ ہوئی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    ریت کی صورت جاں پیاسی تھی آنکھ ہماری نم نہ ہوئی نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites