رفعت کبھی کسی کی گوارا یہاں نہیں

امام بخش ناسخ

رفعت کبھی کسی کی گوارا یہاں نہیں

امام بخش ناسخ

MORE BYامام بخش ناسخ

    رفعت کبھی کسی کی گوارا یہاں نہیں

    جس سر زمیں کے ہم ہیں وہاں آسماں نہیں

    دو روز ایک وضع پہ رنگ جہاں نہیں

    وہ کون سا چمن ہے کہ جس کو خزاں نہیں

    عبرت کی جا ہے لاکھوں ہی طفل و جواں نہیں

    پیری میں بھی خیال اجل کا یہاں نہیں

    دشمن اگر وہ دوست ہوا ہے تو کیا عجب

    یاں اعتماد دوستیٔ جسم و جاں نہیں

    رفتار ناز میں یہ لچک جاتی ہے کہ بس

    گویا تری کمر میں صنم استخواں نہیں

    منعم کے شکر میں بھی ہلائیں کبھی کبھی

    تنہا برائے لذت دنیا زباں نہیں

    پژمردہ ایک ہے تو شگفتہ ہے دوسرا

    باغ جہاں میں فصل بہار و خزاں نہیں

    جن کے سروں پر آپ مگس راں رہے ہما

    ان کا لحد میں آج کوئی استخواں نہیں

    دھوکا نہ کھا ظروف وضو کو تو دیکھ کر

    مسجد ہے مے فروش کی ناسخؔ دکاں نہیں

    مآخذ
    • کتاب : Intekhab-e-Zarrin Urdu Ghazal (Pg. 97)
    • Author : Khvaja Mohammad Zakriya
    • مطبع : Sangat Publishers (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY