روک رکھا تھا جو ان آنکھوں میں کھارا پانی

مرزا اطہر ضیا

روک رکھا تھا جو ان آنکھوں میں کھارا پانی

مرزا اطہر ضیا

MORE BYمرزا اطہر ضیا

    روک رکھا تھا جو ان آنکھوں میں کھارا پانی

    میری دیواروں میں در آیا وہ سارا پانی

    ایک دریا کو دکھائی تھی کبھی پیاس اپنی

    پھر نہیں مانگا کبھی میں نے دوبارا پانی

    اپنی آنکھوں سے نچوڑوں گا کسی روز اسے

    کرتا رہتا ہے بہت مجھ سے کنارا پانی

    اب کے بارش پہ کوئی حق نہیں انسانوں کا

    اب کے چڑیوں کے لیے رب نے اتارا پانی

    میں سمندر سے لگی شور زمیں جیسا ہوں

    مارتا رہتا ہے مجھ کو مرا کھارا پانی

    میں نے ان آنکھوں سے کچھ موتی چنے تھے اطہرؔ

    میرے ہونٹوں میں ابھی جذب ہے کھارا پانی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY