روتے ہیں سن کے کہانی میری

امداد امام اثرؔ

روتے ہیں سن کے کہانی میری

امداد امام اثرؔ

MORE BY امداد امام اثرؔ

    روتے ہیں سن کے کہانی میری

    کاش سنتے وہ زبانی میری

    کٹ گیا غیر مرے نالوں سے

    واہ ری سیف زبانی میری

    آئنہ دیکھ کے فرماتے ہیں

    کس غضب کی ہے جوانی میری

    پھر تمہیں نیند نہیں آنے کی

    کہیں سن لی جو کہانی میری

    بار کیا پاؤں تری محفل میں

    ہے سبک تجھ پہ گرانی میری

    ہمہ تن گوش بنے سنتے ہیں

    غیر کہتا ہے کہانی میری

    یاد آؤں گا جفا کاروں کو

    بے نشانی ہے نشانی میری

    التجا ایک مقدر دو تھے

    غیر کی مانی نہ مانی میری

    حشر میں کچھ نہ ہوا مجھ سے سوال

    واہ ری ہیچ مدانی میری

    اب اٹھیں گے ترے در سے مر کر

    کبھی اٹھتی نہیں ٹھانی میری

    میرے اشعار فغان دل ہیں

    قدر کرتا ہے فغانیؔ میری

    خسرو ملک سخن دانی ہوں

    داد ہے باج ستانی میری

    دل میں پوشیدہ رہے گی کب تک

    آتش شوق نہانی میری

    تار گیسو سے نظر جا الجھی

    دیکھنا ریشہ داوانی میری

    دل کی حالت سے خبر دیتی ہے

    اثرؔ آشفتہ بیانی میری

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY