رکا جواب کی خاطر نہ کچھ سوال کیا

فاطمہ حسن

رکا جواب کی خاطر نہ کچھ سوال کیا

فاطمہ حسن

MORE BYفاطمہ حسن

    رکا جواب کی خاطر نہ کچھ سوال کیا

    مگر یہ زعم کہ ہر رابطہ بحال کیا

    تھکن نہیں ہے کٹھن راستوں پہ چلنے کی

    بچھڑنے والوں کے دکھ نے بہت نڈھال کیا

    جو ٹوٹنا تھا فقط درد ہی کا رشتہ تھا

    تو دل نے کیوں بھلا اس بات پر ملال کیا

    بچا کے رکھنا تھا اک عکس اپنی آنکھوں میں

    بڑے جتن سے انہیں آئینہ مثال کیا

    لہو میں تیر گئی وہ گھڑی جدائی کی

    کہ جس کے زہر نے جینا مرا محال کیا

    بچھڑ رہا تھا مگر مڑ کے دیکھتا بھی رہا

    میں مسکراتی رہی میں نے بھی کمال کیا

    خبر تھی اس کو کہ دشت ہنر سے آئی ہوں

    سو اس کے لفظوں نے زخموں کا اندمال کیا

    مأخذ :
    • کتاب : yadain bhi ab khwab hoin (Pg. 92)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY