رخ پہ احباب کے پھر رنگ مسرت آئے

ملک زادہ منظور احمد

رخ پہ احباب کے پھر رنگ مسرت آئے

ملک زادہ منظور احمد

MORE BYملک زادہ منظور احمد

    رخ پہ احباب کے پھر رنگ مسرت آئے

    پھر مری سمت کوئی سنگ ملامت آئے

    تیری رحمت کا بھرم ٹوٹ رہا ہے شاید

    آج آنکھوں میں مری اشک ندامت آئے

    وقت شاہد ہے کہ ہر دور میں عیسیٰ کی طرح

    ہم صلیبوں پہ لیے اپنی صداقت آئے

    حسن ہے ان میں ترا میرے جنوں کا انداز

    پھول بھی لے کے عجب شکل و شباہت آئے

    دور عشرت نے سنوارے ہیں غزل کے گیسو

    فکر کے پہلو مگر غم کی بدولت آئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY