رکی رکی سی شب مرگ ختم پر آئی

فراق گورکھپوری

رکی رکی سی شب مرگ ختم پر آئی

فراق گورکھپوری

MORE BYفراق گورکھپوری

    رکی رکی سی شب مرگ ختم پر آئی

    وہ پو پھٹی وہ نئی زندگی نظر آئی

    یہ موڑ وہ ہے کہ پرچھائیاں بھی دیں گی نہ ساتھ

    مسافروں سے کہو اس کی رہ گزر آئی

    فضا تبسم صبح بہار تھی لیکن

    پہنچ کے منزل جاناں پہ آنکھ بھر آئی

    کہیں زمان و مکاں میں ہے نام کو بھی سکوں

    مگر یہ بات محبت کی بات پر آئی

    کسی کی بزم طرب میں حیات بٹتی تھی

    امید واروں میں کل موت بھی نظر آئی

    کہاں ہر ایک سے انسانیت کا بار اٹھا

    کہ یہ بلا بھی ترے عاشقوں کے سر آئی

    دلوں میں آج تری یاد مدتوں کے بعد

    بہ چہرۂ متبسم بہ چشم تر آئی

    نیا نہیں ہے مجھے مرگ ناگہاں کا پیام

    ہزار رنگ سے اپنی مجھے خبر آئی

    فضا کو جیسے کوئی راگ چیرتا جائے

    تری نگاہ دلوں میں یوں ہی اتر آئی

    ذرا وصال کے بعد آئنہ تو دیکھ اے دوست

    ترے جمال کی دوشیزگی نکھر آئی

    ترا ہی عکس سرشک غم زمانہ میں تھا

    نگاہ میں تری تصویر سی اتر آئی

    عجب نہیں کہ چمن در چمن بنے ہر پھول

    کلی کلی کی صبا جا کے گود بھر آئی

    شب فراقؔ اٹھے دل میں اور بھی کچھ درد

    کہوں یہ کیسے تری یاد رات بھر آئی

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    نامعلوم

    نامعلوم

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY