روح افسردہ طبیعت مری غم کوش ہوئی

علیم مسرور

روح افسردہ طبیعت مری غم کوش ہوئی

علیم مسرور

MORE BYعلیم مسرور

    روح افسردہ طبیعت مری غم کوش ہوئی

    زندگی اپنے ہی ماتم میں سیہ پوش ہوئی

    فکر فردا ہوئی یا فکر غم دوش ہوئی

    تیری یاد آئی کہ ہر بات فراموش ہوئی

    صحبت شیخ ہوئی صحبت مے نوش ہوئی

    جوش میں روح نہ پھر آئی جو مدہوش ہوئی

    زندگی ان کے فسانوں سے بھی اکتا سی گئی

    جو تھی سر تا بہ قدم گوش گراں گوش ہوئی

    جانے کیا محفل پروانہ میں دیکھا اس نے

    پھر زباں کھل نہ سکی شمع جو خاموش ہوئی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY