روح بخشی ہے کام تجھ لب کا

ولی محمد ولی

روح بخشی ہے کام تجھ لب کا

ولی محمد ولی

MORE BYولی محمد ولی

    روح بخشی ہے کام تجھ لب کا

    دم عیسیٰ ہے نام تجھ لب کا

    حسن کے خضر نے کیا لبریز

    آب حیواں سوں جام تجھ لب کا

    منطق و حکمت و معانی پر

    مشتمل ہے کلام تجھ لب کا

    جنت حسن میں کیا حق نے

    حوض کوثر مقام تجھ لب کا

    رگ یاقوت کے قلم سوں لکھیں

    خط پرستاں پیام تجھ لب کا

    سبزہ و برگ و لالہ رکھتے ہیں

    شوق دل میں دوام تجھ لب کا

    غرق شکر ہوئے ہیں کام و زباں

    جب لیا ہوں میں نام تجھ لب کا

    مثل یاقوت خط میں ہے شاگرد

    ساغر مے مدام تجھ لب کا

    ہے ولیؔ کی زباں کو لذت بخش

    ذکر ہر صبح و شام تجھ لب کا

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY