روح گر نوحہ کناں ہو تو غزل ہوتی ہے

پیرزادہ قاسم

روح گر نوحہ کناں ہو تو غزل ہوتی ہے

پیرزادہ قاسم

MORE BYپیرزادہ قاسم

    روح گر نوحہ کناں ہو تو غزل ہوتی ہے

    دل کو احساس زیاں ہو تو غزل ہوتی ہے

    محفل ماہ وشاں میں تو غزل ہو نہ سکی

    بزم آشفتہ سراں ہو تو غزل ہوتی ہے

    صرف آنکھوں میں نمی سے نہ بنے گی کوئی بات

    ایک دریا سا رواں ہو تو غزل ہوتی ہے

    میں نے محسوس کیا ہے کہ کسی کی وہ نظر

    میری جانب نگراں ہو تو غزل ہوتی ہے

    دھیمے دھیمے سے سلگتے ہوئے جذبات کے ساتھ

    میرؔ کا طرز بیاں ہو تو غزل ہوتی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY