روح میں تازگی نہیں قلب میں روشنی نہیں

آرزو سہارنپوری

روح میں تازگی نہیں قلب میں روشنی نہیں

آرزو سہارنپوری

MORE BYآرزو سہارنپوری

    روح میں تازگی نہیں قلب میں روشنی نہیں

    تیری قسم ترے بغیر زندگی زندگی نہیں

    تذکرۂ خدا نہیں سلسلۂ خودی نہیں

    اب میں وہاں ہوں جس جگہ میرے سوا کوئی نہیں

    سجدۂ دوست کے لئے چاہئے جذب بے خودی

    بندگی اور بہ قید ہوش کفر ہے بندگی نہیں

    سست قدم تھے مہر و ماہ رہ گئے مثل گرد راہ

    منزل عشق میں مرا ہم سفر اب کوئی نہیں

    ذوق طلب ہے حاصل حسن تمام کائنات

    طالب دید بھی تو ہو جلوؤں کی کچھ کمی نہیں

    نغمۂ دل پہ جھومنا پائے صنم کو چومنا

    زاہد خشک تر ابھی واقف بندگی نہیں

    آرزوؔ دل کے ساتھ ساتھ ہوش و خرد بھی پھونک دے

    عشق میں آرزوئے عشق شان قلندری نہیں

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY