صاف کب امتحان لیتے ہیں

داغؔ دہلوی

صاف کب امتحان لیتے ہیں

داغؔ دہلوی

MORE BYداغؔ دہلوی

    صاف کب امتحان لیتے ہیں

    وہ تو دم دے کے جان لیتے ہیں

    یوں ہے منظور خانہ ویرانی

    مول میرا مکان لیتے ہیں

    تم تغافل کرو رقیبوں سے

    جاننے والے جان لیتے ہیں

    پھر نہ آنا اگر کوئی بھیجے

    نامہ بر سے زبان لیتے ہیں

    اب بھی گر پڑ کے ضعف سے نالے

    ساتواں آسمان لیتے ہیں

    تیرے خنجر سے بھی تو اے قاتل

    نوک کی نوجوان لیتے ہیں

    اپنے بسمل کا سر ہے زانو پر

    کس محبت سے جان لیتے ہیں

    یہ سنا ہے مرے لیے تلوار

    اک مرے مہربان لیتے ہیں

    یہ نہ کہہ ہم سے تیرے منہ میں خاک

    اس میں تیری زبان لیتے ہیں

    کون جاتا ہے اس گلی میں جسے

    دور سے پاسبان لیتے ہیں

    منزل شوق طے نہیں ہوتی

    ٹھیکیاں ناتوان لیتے ہیں

    کر گزرتے ہیں ہو بری کہ بھلی

    دل میں جو کچھ وہ ٹھان لیتے ہیں

    وہ جھگڑتے ہیں جب رقیبوں سے

    بیچ میں مجھ کو سان لیتے ہیں

    ضد ہر اک بات پر نہیں اچھی

    دوست کی دوست مان لیتے ہیں

    مستعد ہو کے یہ کہو تو سہی

    آئیے امتحان لیتے ہیں

    داغؔ بھی ہے عجیب سحر بیاں

    بات جس کی وہ مان لیتے ہیں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    صاف کب امتحان لیتے ہیں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY