صاف ظاہر ہے نگاہوں سے کہ ہم مرتے ہیں

اختر انصاری

صاف ظاہر ہے نگاہوں سے کہ ہم مرتے ہیں

اختر انصاری

MORE BY اختر انصاری

    صاف ظاہر ہے نگاہوں سے کہ ہم مرتے ہیں

    منہ سے کہتے ہوئے یہ بات مگر ڈرتے ہیں

    ایک تصویر محبت ہے جوانی گویا

    جس میں رنگوں کے عوض خون جگر بھرتے ہیں

    عشرت رفتہ نے جا کر نہ کیا یاد ہمیں

    عشرت رفتہ کو ہم یاد کیا کرتے ہیں

    آسماں سے کبھی دیکھی نہ گئی اپنی خوشی

    اب یہ حالت ہے کہ ہم ہنستے ہوئے ڈرتے ہیں

    شعر کہتے ہو بہت خوب تم اخترؔ لیکن

    اچھے شاعر یہ سنا ہے کہ جواں مرتے ہیں

    مآخذ:

    • کتاب : Nuquush Lahore (Pg. 218)
    • Author : Mohd Tufail
    • مطبع : Idara Farog-e-urdu, Lahore (Feb.1956 )
    • اشاعت : Feb.1956

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY