سامان صد ہزار ہیں تو جاگ تو سہی

اختر ضیائی

سامان صد ہزار ہیں تو جاگ تو سہی

اختر ضیائی

MORE BYاختر ضیائی

    سامان صد ہزار ہیں تو جاگ تو سہی

    سب وقف انتظار ہیں تو جاگ تو سہی

    غافل نظر اٹھا کہ وہ آثار صبح نو

    گردوں پہ آشکار ہیں تو جاگ تو سہی

    اوقات تیری قوت بازو پہ منحصر

    لمحات سازگار ہیں تو جاگ تو سہی

    تیرا یقین تیرا عمل تیرے ولولے

    ہستی کا اعتبار ہیں تو جاگ تو سہی

    او محو خواب دیدۂ بینا کے واسطے

    خود جلوے بے قرار ہیں تو جاگ تو سہی

    بے برگ بے لباس درختوں کی ٹہنیاں

    پیغام نو بہار ہیں تو جاگ تو سہی

    اخترؔ ضیائی نیند کے ماتوں کے شہر میں

    کچھ لوگ ہوشیار ہیں تو جاگ تو سہی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY