سانس کے شور کو جھنکار نہ سمجھا جائے

عباس تابش

سانس کے شور کو جھنکار نہ سمجھا جائے

عباس تابش

MORE BYعباس تابش

    سانس کے شور کو جھنکار نہ سمجھا جائے

    ہم کو اندر سے گرفتار نہ سمجھا جائے

    اس کو رستے سے ہٹانے کا یہ مطلب تو نہیں

    کسی دیوار کو دیوار نہ سمجھا جائے

    میں کسی اور حوالے سے اسے دیکھتا ہوں

    مجھ کو دنیا کا طرف دار نہ سمجھا جائے

    یہ زمیں تو ہے کسی کاغذی کشتی جیسی

    بیٹھ جاتا ہوں اگر بار نہ سمجھا جائے

    اس کو عادت ہے گھنے پیڑ میں سو جانے کی

    چاند کو دیدۂ بے دار نہ سمجھا جائے

    اپنی باتوں پہ وہ قائم نہیں رہتا تابشؔ

    اس کے انکار کو انکار نہ سمجھا جائے

    مأخذ :
    • کتاب : Ishq Abaab (Pg. 245)
    • Author : Abbas Tabish
    • اشاعت : 2011

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے