سانس سینے میں جکڑ جاتا ہے

صفدر ہمدانی

سانس سینے میں جکڑ جاتا ہے

صفدر ہمدانی

MORE BYصفدر ہمدانی

    سانس سینے میں جکڑ جاتا ہے

    اب تعلق جو بگڑ جاتا ہے

    مدتوں ہو نہ ملاقات اگر

    فاصلہ طول پکڑ جاتا ہے

    جس کا رشتہ نہ زمیں سے قائم

    وہ شجر جڑ سے اکھڑ جاتا ہے

    کب میں آتا ہوں شکنجے میں بھلا

    اک خیال اس کا جکڑ جاتا ہے

    جہاں دیواروں میں در روتے ہوں

    ایسا گھر جلد اجڑ جاتا ہے

    مجھ میں آسیب بسا ہے صفدرؔ

    جو بھی ملتا ہے بچھڑ جاتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY