سارے لہجے ترے بے زماں ایک میں

محسن نقوی

سارے لہجے ترے بے زماں ایک میں

محسن نقوی

MORE BYمحسن نقوی

    سارے لہجے ترے بے زماں ایک میں

    اس بھرے شہر میں رائیگاں ایک میں

    وصل کے شہر کی روشنی ایک تو

    ہجر کے دشت میں کارواں ایک میں

    بجلیوں سے بھری بارشیں زور پر

    اپنی بستی میں کچا مکاں ایک میں

    حسرتوں سے اٹے آسماں کے تلے

    جلتی بجھتی ہوئی کہکشاں ایک میں

    مجھ کو فارغ دنوں کی امانت سمجھ

    بھولی بسری ہوئی داستاں ایک میں

    رونقیں شور میلے جھمیلے ترے

    اپنی تنہائی کا رازداں ایک میں

    ایک میں اپنی ہی زندگی کا بھرم

    اپنی ہی موت پر نوحہ خواں ایک میں

    اس طرف سنگ باری ہر اک بام سے

    اس طرف آئنوں کی دکاں ایک میں

    وہ نہیں ہے تو محسنؔ یہ مت سوچنا

    اب بھٹکتا پھروں گا کہاں ایک میں

    مآخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-mohsin (Pg. 1137)
    • Author : Mohsin Naqvi
    • مطبع : Mavra Publishers (2010)
    • اشاعت : 2010

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY